یہ آج آئے ہیں کس اجنبی سے دیس میں ہم (ردیف .. ے)

صوفی تبسم

یہ آج آئے ہیں کس اجنبی سے دیس میں ہم (ردیف .. ے)

صوفی تبسم

MORE BYصوفی تبسم

    یہ آج آئے ہیں کس اجنبی سے دیس میں ہم

    تڑپ گئی ہے نظر چشم آشنا کے لئے

    وہ ہاتھ جن سے تھا کل چاک دامن افلاک

    وہ ہاتھ آج اٹھانے پڑے دعا کے لئے

    یہ میں نے مانا جدائی مرا مقدر ہے

    مگر یہ بات نہ منہ سے کہو خدا کے لئے

    یہ راہرو تھے کبھی راہ زندگی کا سراغ

    یہ راہرو کہ بھٹکتے ہیں رہنما کے لئے

    مأخذ :
    • کتاب : Nuquush Lahore (Pg. 207)
    • Author : Mohd Tufail
    • مطبع : Idara Farog-e-urdu, Lahore (Feb.1956)
    • اشاعت : Feb.1956

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY