یہ الگ بات کہ وہ مجھ سے خفا رہتا ہے

سلمان اختر

یہ الگ بات کہ وہ مجھ سے خفا رہتا ہے

سلمان اختر

MORE BYسلمان اختر

    یہ الگ بات کہ وہ مجھ سے خفا رہتا ہے

    میں اک انسان ہوں اور مجھ میں خدا رہتا ہے

    میری باتوں میں بہت اس کی جھلک آتی ہے

    اس کے لہجے میں مرا ذہن بسا رہتا ہے

    قید میں اس سے بہادر نہ کوئی دیکھا تھا

    اب جو آزاد ہے تھوڑا سا ڈرا رہتا ہے

    اور لوگوں کی نگاہوں میں برا ہو لیکن

    اپنی نظروں میں بھی گر جائے تو کیا رہتا ہے

    پل سے گزرے تو ندی دھیان سے دیکھی ہم نے

    ورنہ منظر یہ نگاہوں سے چھپا رہتا ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Soch Samajh (Pg. 56)
    • Author : Salman Akhtar
    • مطبع : Star Publishers Pvt.Ltd, N. Delhi (2015)
    • اشاعت : 2015

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY