یہ اور بات تیری گلی میں نہ آئیں ہم

حبیب جالب

یہ اور بات تیری گلی میں نہ آئیں ہم

حبیب جالب

MORE BYحبیب جالب

    یہ اور بات تیری گلی میں نہ آئیں ہم

    لیکن یہ کیا کہ شہر ترا چھوڑ جائیں ہم

    مدت ہوئی ہے کوئے بتاں کی طرف گئے

    آوارگی سے دل کو کہاں تک بچائیں ہم

    شاید بہ قید زیست یہ ساعت نہ آ سکے

    تم داستان شوق سنو اور سنائیں ہم

    بے نور ہو چکی ہے بہت شہر کی فضا

    تاریک راستوں میں کہیں کھو نہ جائیں ہم

    اس کے بغیر آج بہت جی اداس ہے

    جالبؔ چلو کہیں سے اسے ڈھونڈ لائیں ہم

    مأخذ :
    • کتاب : kulliyat-e-habib jaalib (Pg. 26)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے