یہ بات بات میں کیا نازکی نکلتی ہے

داغؔ دہلوی

یہ بات بات میں کیا نازکی نکلتی ہے

داغؔ دہلوی

MORE BYداغؔ دہلوی

    یہ بات بات میں کیا نازکی نکلتی ہے

    دبی دبی ترے لب سے ہنسی نکلتی ہے

    ٹھہر ٹھہر کے جلا دل کو ایک بار نہ پھونک

    کہ اس میں بوئے محبت ابھی نکلتی ہے

    بجائے شکوہ بھی دیتا ہوں میں دعا اس کو

    مری زباں سے کروں کیا یہی نکلتی ہے

    خوشی میں ہم نے یہ شوخی کبھی نہیں دیکھی

    دم عتاب جو رنگت تری نکلتی ہے

    ہزار بار جو مانگا کرو تو کیا حاصل

    دعا وہی ہے جو دل سے کبھی نکلتی ہے

    ادا سے تیری مگر کھنچ رہیں ہیں تلواریں

    نگہ نگہ سے چھری پر چھری نکلتی ہے

    محیط عشق میں ہے کیا امید و بیم مجھے

    کہ ڈوب ڈوب کے کشتی مری نکلتی ہے

    جھلک رہی ہے سر شاخ مژہ خون کی بوند

    شجر میں پہلے ثمر سے کلی نکلتی ہے

    شب فراق جو کھولے ہیں ہم نے زخم جگر

    یہ انتظار ہے کب چاندنی نکلتی ہے

    سمجھ تو لیجئے کہنے تو دیجئے مطلب

    بیاں سے پہلے ہی مجھ پر چھری نکلتی ہے

    یہ دل کی آگ ہے یا دل کے نور کا ہے ظہور

    نفس نفس میں مرے روشنی نکلتی ہے

    کہا جو میں نے کہ مر جاؤں گا تو کہتے ہیں

    ہمارے زائچے میں زندگی نکلتی ہے

    سمجھنے والے سمجھتے ہیں پیچ کی تقریر

    کہ کچھ نہ کچھ تری باتوں میں فی نکلتی ہے

    دم اخیر تصور ہے کس پری وش کا

    کہ میری روح بھی بن کر پری نکلتی ہے

    صنم کدے میں بھی ہے حسن اک خدائی کا

    کہ جو نکلتی ہے صورت پری نکلتی ہے

    مرے نکالے نہ نکلے گی آرزو میری

    جو تم نکالنا چاہو ابھی نکلتی ہے

    غم فراق میں ہو داغؔ اس قدر بیتاب

    ذرا سے رنج میں جاں آپ کی نکلتی ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    یہ بات بات میں کیا نازکی نکلتی ہے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY