یہ بھی کیا کم ہے کہ ہم بیتاب حالت میں رہے

پیرزادہ قاسم

یہ بھی کیا کم ہے کہ ہم بیتاب حالت میں رہے

پیرزادہ قاسم

MORE BYپیرزادہ قاسم

    یہ بھی کیا کم ہے کہ ہم بیتاب حالت میں رہے

    بن نہ پائے کچھ بھی لیکن دست قدرت میں رہے

    ہم کو آنکھوں میں بسایا وقت نے مانند خواب

    اور ہم تعبیر ہو جانے کی حسرت میں رہے

    ہم نے صحرا ہو کہ گلشن ایک جیسا کر دیا

    جس ٹھکانے بھی رہے زنجیر وحشت میں رہے

    اب صلہ حسن عمل کا کیا ملا کیا جانیے

    روشنی تھے ہم سو شعلے کی رفاقت میں رہے

    خلوت جاں میں بڑی فرصت سے آ بیٹھا ہے غم

    عرصۂ فرصت ملا تو ہم بھی فرصت میں رہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY