یہ داستاں ہے شہیدوں کی خوں چکیدہ ہے

اظہار اثر

یہ داستاں ہے شہیدوں کی خوں چکیدہ ہے

اظہار اثر

MORE BYاظہار اثر

    یہ داستاں ہے شہیدوں کی خوں چکیدہ ہے

    قلم بھی دست مورخ میں سر بریدہ ہے

    حیات ایسی زلیخا کہ آج کا یوسف

    گناہگار ہے اور پیرہن دریدہ ہے

    لہو جلاؤ چراغوں میں روشنی کے لیے

    ہمارے دور کا سورج تو شب گزیدہ ہے

    دبا دبا سا یہ طوفاں گھٹی گھٹی ہلچل

    ہواؤں میں کوئی پیغام نا رسیدہ ہے

    تمام مظہر فطرت ترے غزل خواں ہیں

    یہ چاندنی بھی ترے جسم کا قصیدہ ہے

    نہ بجھ سکے گی مری پیاس آنسوؤں سے اثرؔ

    یہ ابر کیوں مری حالت پہ آبدیدہ ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY