یہ حادثہ تو ہوا ہی نہیں ہے تیرے بعد

کفیل آزر امروہوی

یہ حادثہ تو ہوا ہی نہیں ہے تیرے بعد

کفیل آزر امروہوی

MORE BYکفیل آزر امروہوی

    یہ حادثہ تو ہوا ہی نہیں ہے تیرے بعد

    غزل کسی کو کہا ہی نہیں ہے تیرے بعد

    ہے پر سکون سمندر کچھ اس طرح دل کا

    کہ جیسے چاند کھلا ہی نہیں ہے تیرے بعد

    مہکتی رات سے دل سے قلم سے کاغذ سے

    کسی سے ربط رکھا ہی نہیں ہے تیرے بعد

    خیال خواب فسانے کہانیاں تھیں مگر

    وہ خط تجھے بھی لکھا ہی نہیں ہے تیرے بعد

    کہاں سے مہکے گی ہونٹوں پہ لمس کی خوشبو

    کسی کو میں نے چھوا ہی نہیں ہے تیرے بعد

    چراغ پلکوں پہ آذرؔ کسی کی یادوں کا

    قسم خدا کی جلا ہی نہیں ہے تیرے بعد

    مآخذ
    • کتاب : Karwaan-e-Ghazal (Pg. 342)
    • Author : Farooq Argali
    • مطبع : Farid Book Depot (Pvt.) Ltd (2004)
    • اشاعت : 2004

    موضوعات:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY