یہ ابتدا ہے کوئی اختتام تھوڑی ہے

زبیر احمد تنہا ملک رام پوری

یہ ابتدا ہے کوئی اختتام تھوڑی ہے

زبیر احمد تنہا ملک رام پوری

MORE BYزبیر احمد تنہا ملک رام پوری

    یہ ابتدا ہے کوئی اختتام تھوڑی ہے

    ہے شام وصل بچھڑنے کی شام تھوڑی ہے

    ابھی تو آئے ہو جانے کی بات کرتے ہو

    محبتوں سے بڑا کوئی کام تھوڑی ہے

    سبھی کو جانا ہے دنیا کو چھوڑ کر اک دن

    کسی بشر کو بھی حاصل دوام تھوڑی ہے

    جہاں میں نفرتیں بانٹو کسی کا قتل کرو

    تمہارے واسطے کچھ بھی حرام تھوڑی ہے

    تری نظر کا ہی ساقی ہوں بس میں دیوانہ

    مری نظر میں صراحی‌ و جام تھوڑی ہے

    وفا کسی کو میسر ہی کب ہوئی ہے یہاں

    جو حکمراں ہے وہ راون ہے رام تھوڑی ہے

    بہت سے لوگوں نے ہم پر ستم کئے ہیں ملکؔ

    ہمارے لب پہ کسی کا بھی نام تھوڑی ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے