یہ اک اور ہم نے قرینہ کیا

ابو الحسنات حقی

یہ اک اور ہم نے قرینہ کیا

ابو الحسنات حقی

MORE BY ابو الحسنات حقی

    INTERESTING FACT

    شمارہ 197،جنوری 1996

    یہ اک اور ہم نے قرینہ کیا

    در یار تک دل کو زینہ کیا

    بدل دی ہے سب صورت آب و خاک

    مگر جب لہو کو پسینہ کیا

    وہ کشتی سے دیتے تھے منظر کی داد

    سو ہم نے بھی گھر کا سفینہ کیا

    کہاں ہم تک آیا کوئی راز جو

    کہاں ہم نے دل کو دفینہ کیا

    فقیروں کا یہ بھی طلسمات ہے

    لہو رنگ کو آبگینہ کیا

    چمکنے لگا پھر غم رائگاں

    مگر ایک جب زخم و سینہ کیا

    مآخذ:

    • کتاب : Shabkhoon (Urdu Monthly) (Pg. 664)
    • Author : Shamsur Rahman Faruqi
    • مطبع : Shabkhoon Po. Box No.13, 313 rani Mandi Allahabad (June December 2005áIssue No. 293 To 299âPart II)
    • اشاعت : June December 2005áIssue No. 293 To 299âPart II

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY