یہ جو شب کے ایوانوں میں اک ہلچل اک حشر بپا ہے

حبیب جالب

یہ جو شب کے ایوانوں میں اک ہلچل اک حشر بپا ہے

حبیب جالب

MORE BYحبیب جالب

    یہ جو شب کے ایوانوں میں اک ہلچل اک حشر بپا ہے

    یہ جو اندھیرا سمٹ رہا ہے یہ جو اجالا پھیل رہا ہے

    یہ جو ہر دکھ سہنے والا دکھ کا مداوا جان گیا ہے

    مظلوموں مجبوروں کا غم یہ جو مرے شعروں میں ڈھلا ہے

    یہ جو مہک گلشن گلشن ہے یہ جو چمک عالم عالم ہے

    مارکسزم ہے مارکسزم ہے مارکسزم ہے مارکسزم ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے