یہ جو تیری آنکھوں میں معنیٔ وفا سا ہے

ظفر انصاری ظفر

یہ جو تیری آنکھوں میں معنیٔ وفا سا ہے

ظفر انصاری ظفر

MORE BYظفر انصاری ظفر

    یہ جو تیری آنکھوں میں معنیٔ وفا سا ہے

    کاسۂ تمنا کے حرف مدعا سا ہے

    میرے خون کی سرخی سرخیٔ وفا ٹھہری

    جس سے روئے قاتل بھی سرخ رو بنا سا ہے

    قتل گاہ ارماں ہے جس کی محفل عشرت

    وہ نگار فتنہ زا پیکر وفا سا ہے

    جب سے مجھ کو حاصل ہے تیرے قرب کی دولت

    نقش سنگ پائندہ مجھ پہ آئنہ سا ہے

    لفظ اور معنی کا یہ تعلق باہم

    پیش‌ دیدۂ بینا رشتۂ وفا سا ہے

    رخش فکر کو اپنے کیجیے ذرا مہمیز

    نو بہ نو مضامیں کا در ابھی کھلا سا ہے

    باب شہر عرفاں کے نور چشم کا ہے فیض

    پرچم جہول وقت جو جھکا جھکا سا ہے

    دشمنوں کے نرغے میں میں کھڑا ہوں تنہا سا

    معرکہ محبت کا جنگ کربلا سا ہے

    ہونٹ تیرے پھولوں سے بات تیری خوشبو سی

    روپ چاند سا تیرا دل بھی آئنہ سا ہے

    پرچم محبت ہے جب سے میرے ہاتھوں میں

    درد دل نشیں سا ہے زخم دل ربا سا ہے

    دم میں سر اٹھاتا ہے دم میں ٹوٹ جاتا ہے

    دل بھی بحر الفت میں کوئی بلبلا سا ہے

    شور حشر برپا ہے یا کہ شور تنہائی

    ہیں بجھی بجھی آنکھیں دل ڈرا ڈرا سا ہے

    وہ نگاہ جاناں کا غمزۂ بلا انگیز

    مصحف محبت کے حرف ابتدا سا ہے

    میرے دل کی خاطر تو یہ فسانۂ ہستی

    زخم بے رفو سا ہے درد لا دوا سا ہے

    بس تری نگاہوں میں احتجاج ہے باطل

    ہر جفا مناسب سی ہر ستم روا سا ہے

    نیند کیوں نہیں آتی خواب خواب آنکھوں کو

    شہر جاں میں ہر جانب کیوں یہ رت جگا سا ہے

    چہرۂ محبت پر ہے اسی سے تابانی

    یہ غبار پائے ناز غازۂ وفا سا ہے

    مجھ کو مل ہی جائے گی اک نہ ایک دن منزل

    بس اسی توقع پر دل میں حوصلہ سا ہے

    کون ہے جو رکھتا ہے دوست اس قدر مجھ کو

    اجنبی سی دنیا میں کون آشنا سا ہے

    اے ظفرؔ نہ چھوڑے گا وہ مجھے دعا دینا

    یوں تو ہے وہ برہم سا یوں تو وہ خفا سا ہے

    مآخذ:

    • کتاب : Sharar-e-sang (Pg. 62)
    • Author : Zafar Ansari Zafar
    • مطبع : Educational Publishing House (2015)
    • اشاعت : 2015

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY