Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

یہ کربلا ہے نذر بلا ہم ہوئے کہ تم

رئیس امروہوی

یہ کربلا ہے نذر بلا ہم ہوئے کہ تم

رئیس امروہوی

MORE BYرئیس امروہوی

    یہ کربلا ہے نذر بلا ہم ہوئے کہ تم

    ناموس قافلہ پہ فدا ہم ہوئے کہ تم

    کیوں دجلہ و فرات کے دعوے کہ نہر پر

    تشنہ دہن شہید جفا ہم ہوئے کہ تم

    مانا کہ سب اجل کے مقابل تھے سر بکف

    لیکن شکار تیر قضا ہم ہوئے کہ تم

    تم بھی فریب خوردہ سہی پر بصد خلوص

    مقتول مکر و صید دغا ہم ہوئے کہ تم

    تم شاخ گل سے اڑ کے گئے شاخ گل کی سمت

    اپنے نشیمنوں سے جدا ہم ہوئے کہ تم

    استاد صبر و نکتہ شناس رضا تھے تم

    لیکن قتیل صبر و رضا ہم ہوئے کہ تم

    سو بار راستے میں لٹا ہے جو کارواں

    اس کارواں کے راہنما ہم ہوئے کہ تم

    پیکان نیزہ و رسن و دار ہے گواہ

    سر دے کے سر بلند وفا ہم ہوئے کہ تم

    پیمان شوق کس نے نباہا قدم قدم

    اور حق عاشقی سے ادا ہم ہوئے کہ تم

    تم بھی نثار دوست تھے ہم بھی نثار دوست

    خود فیصلہ کرو کہ فدا ہم ہوئے کہ تم

    تم بھی جلوس موسم گل میں تھے پیش پیش

    آوارہ مثل باد صبا ہم ہوئے کہ تم

    تم لاکھ ہم سفر تھے پر انصاف تو کرو

    یارو ہلاک لغزش پا ہم ہوئے کہ تم

    مأخذ :
    • کتاب : Hikayat-e-ne (Pg. 18)
    • Author : Rais Amrohvi
    • مطبع : Rais Acadami, Garden Est, krachis (1975)
    • اشاعت : 1975
    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    મધ્યકાલથી લઈ સાંપ્રત સમય સુધીની ચૂંટેલી કવિતાનો ખજાનો હવે છે માત્ર એક ક્લિક પર. સાથે સાથે સાહિત્યિક વીડિયો અને શબ્દકોશની સગવડ પણ છે. સંતસાહિત્ય, ડાયસ્પોરા સાહિત્ય, પ્રતિબદ્ધ સાહિત્ય અને ગુજરાતના અનેક ઐતિહાસિક પુસ્તકાલયોના દુર્લભ પુસ્તકો પણ તમે રેખ્તા ગુજરાતી પર વાંચી શકશો

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے