یہ کس مقام پہ ٹھہرا ہے کاروان وفا

رضا ہمدانی

یہ کس مقام پہ ٹھہرا ہے کاروان وفا

رضا ہمدانی

MORE BYرضا ہمدانی

    یہ کس مقام پہ ٹھہرا ہے کاروان وفا

    نہ روشنی کی کرن ہے کہیں نہ تازہ ہوا

    ہوئی ہے جب سے یہاں نطق و لب کی بخیہ گری

    سوائے حسرت اظہار دل میں کچھ نہ رہا

    اس اہتمام سے شب خوں پڑا کہ مدت سے

    اجاڑ سی نظر آتی ہے شہر دل کی فضا

    تمام عمر اسی کی تلاش میں گزری

    وہ ایک عکس جو آئینۂ نظر میں نہ تھا

    یہ کس نے آج دبے پاؤں دل میں آتے ہی

    خیال و فکر کا قفل سکوت توڑ دیا

    کچھ اس طرح سے تری یاد کی مہک آئی

    کہ جیسے دامن صحرا میں کوئی پھول کھلا

    شکست دل پہ رضاؔ ہم بھی ٹوٹ کر روئے

    مگر نہ اتنے کہ سو ہی سکے نہ ہم سایا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY