یہ کیا طلسم ہے دنیا پہ بار گزری ہے

سید عابد علی عابد

یہ کیا طلسم ہے دنیا پہ بار گزری ہے

سید عابد علی عابد

MORE BYسید عابد علی عابد

    یہ کیا طلسم ہے دنیا پہ بار گزری ہے

    وہ زندگی جو سر رہ گزار گزری ہے

    گلوں کی گم شدگی سے سراغ ملتا ہے

    کہیں چمن سے نسیم بہار گزری ہے

    کہیں سحر کا اجالا ہوا ہے ہم نفسو

    کہ موج برق سر شاخسار گزری ہے

    رہا ہے یہ سر شوریدہ مثل شعلہ بلند

    اگرچہ مجھ پہ قیامت ہزار گزری ہے

    یہ حادثہ بھی ہوا ہے کہ عشق یار کی یاد

    دیار قلب سے بیگانہ وار گزری ہے

    انہیں کو عرض وفا کا تھا اشتیاق بہت

    انہیں کو عرض وفا نا گوار گزری ہے

    حریم شوق مہکتا ہے آج تک عابدؔ

    یہاں سے نکہت گیسوئے یار گزری ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    یہ کیا طلسم ہے دنیا پہ بار گزری ہے نعمان شوق

    مآخذ:

    • کتاب : Jadeed Shora-e-Urdu (Pg. 698)
    • Author : Dr. Abdul Wahid
    • مطبع : Feroz sons Printers Publishers and Stationers

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY