یہ مان لینے میں ایسی بھی کیا برائی ہے

عبدالسلام عاصم

یہ مان لینے میں ایسی بھی کیا برائی ہے

عبدالسلام عاصم

MORE BYعبدالسلام عاصم

    یہ مان لینے میں ایسی بھی کیا برائی ہے

    سمجھ میں دیر سے اک اچھی بات آئی ہے

    دیا ہے تم نے بصد زعم انتہا کا نام

    جسے وہ مرحلۂ شوق ابتدائی ہے

    ہیں تجھ سے بڑھ کے یہاں تیرے سارے ہم سایے

    مرے خدا یہ تری کیسی کبریائی ہے

    وہ جن کو کر گیا بے نور آگہی کا طلسم

    کہاں ان آنکھوں کو پھر صبح راس آئی ہے

    بضد ہیں وہ بھی کہ میں ان ہی کی طرح سوچوں

    وہ جن سے دور کا رشتہ نہ آشنائی ہے

    بتاؤں کیا اسے آشوب روزگار عاصمؔ

    جو میرے واسطے وجہ غزل سرائی ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY