یہ میکش کون باصد لغزش مستانہ آتا ہے

امن لکھنوی

یہ میکش کون باصد لغزش مستانہ آتا ہے

امن لکھنوی

MORE BYامن لکھنوی

    یہ میکش کون باصد لغزش مستانہ آتا ہے

    اشارے ہوتے ہیں وہ رونق مے خانہ آتا ہے

    تمہاری بزم بھی کیا بزم ہے آداب ہیں کیسے

    وہی مقبول ہوتا ہے جو گستاخانہ آتا ہے

    کہانی اپنی اپنی اہل محفل جب سناتے ہیں

    مجھے بھی یاد اک بھولا ہوا افسانہ آتا ہے

    دعا تیری ترے منتر بھلا مقبول کیا ہوں گے

    بدی دل میں لیے سوئے عبادت خانہ آتا ہے

    ہوائے تازہ ابر تر فزوں جوش نمو لیکن

    نصیب دشمناں ہے کھیت میں جو دانہ آتا ہے

    ہر اک ٹھوکر پہ ہے اے امنؔ لغزش کا گماں مجھ کو

    ہر اک پتھر نظر سنگ در مے خانہ آتا ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Aazadi ke baad dehli men urdu gazal (Pg. 58)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY