یہ میز یہ کتاب یہ دیوار اور میں

ذوالفقار عادل

یہ میز یہ کتاب یہ دیوار اور میں

ذوالفقار عادل

MORE BYذوالفقار عادل

    یہ میز یہ کتاب یہ دیوار اور میں

    کھڑکی میں زرد پھولوں کا انبار اور میں

    ہر شام اس خیال سے ہوتا ہے جی اداس

    پنچھی تو جا رہے ہیں افق پار اور میں

    اک عمر اپنی اپنی جگہ پر کھڑے رہے

    اک دوسرے کے خوف سے دیوار اور میں

    سرکار ہر درخت سے بنتے نہیں ہیں تخت

    قربان آپ پر مرے اوزار اور میں

    لے کر تو آ گیا ہوں مرے پاس جو بھی تھا

    اب سوچتا ہوں تیرا خریدار اور میں

    خوشبو ہے اک فضاؤں میں پھیلی ہوئی جسے

    پہچانتے ہیں صرف سگ یار اور میں

    کھوئے ہوؤں کو ڈھونڈنے نکلا تھا آفتاب

    دنیا تو مل گئی سر بازار اور میں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY