یہ نگاہ شرم جھکی جھکی یہ جبین ناز دھواں دھواں

اقبال عظیم

یہ نگاہ شرم جھکی جھکی یہ جبین ناز دھواں دھواں

اقبال عظیم

MORE BYاقبال عظیم

    یہ نگاہ شرم جھکی جھکی یہ جبین ناز دھواں دھواں

    مرے بس کی اب نہیں داستاں مرا کانپتا ہے رواں رواں

    یہ تخیلات کی زندگی یہ تصورات کی بندگی

    فقط اک فریب خیال پر مری زندگی ہے رواں دواں

    مرے دل پہ نقش ہیں آج تک وہ بہ احتیاط نوازشیں

    وہ غرور و ضبط عیاں عیاں وہ خلوص و ربط نہاں نہاں

    نہ سفر بہ شرط مآل ہے نہ طلب بہ قید سوال ہے

    فقط ایک سیریٔ ذوق کو میں بھٹک رہا ہوں کہاں کہاں

    ہو طلسم عالم رنگ و بو کہ حریم انجم و کہکشاں

    مرا ساتھ دے گی نظر مری وہ چھپیں گے جا کے جہاں جہاں

    مری خلوتوں کی یہ جنتیں کئی بار سج کے اجڑ گئیں

    مجھے بارہا یہ ہوا گماں کہ تم آ رہے ہو کشاں کشاں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY