یہ رہ عشق ہے اس راہ پہ گر جائے گا تو

ابرار احمد

یہ رہ عشق ہے اس راہ پہ گر جائے گا تو

ابرار احمد

MORE BYابرار احمد

    یہ رہ عشق ہے اس راہ پہ گر جائے گا تو

    ایک دیوار کھڑی ہوگی جدھر جائے گا تو

    شور دنیا کو تو سن رنگ رہ یار تو دیکھ

    ہم جہاں خاک اڑاتے ہیں ادھر جائے گا تو

    در بہ در ہے تو کہیں جی نہیں لگتا ہوگا

    وہ بھی دن آئے گا تھک ہار کے گھر جائے گا تو

    عازم ہجر مسلسل ہوا اس مٹی سے

    لوٹ آئے گا یہیں اور کدھر جائے گا تو

    جان جائے گا کہ منزل نہیں موجود کہیں

    خوش گماں ہے ابھی سرگرم سفر جائے گا تو

    آرزو رکھ اسے پانے کی کوئی روز ابھی

    پھر یہیں بام تمنا سے اتر جائے گا تو

    یہ جو طوفان ترے گرد ہے دیوانگی کا

    اک ذرا تیز ہوا اور بکھر جائے گا تو

    کارواں رد ہوا اور چپ ہوئی آواز جرس

    کیا اب اس سمت کو تا حد نظر جائے گا تو

    اب کہاں خواب محبت کہ وہ شب دور نہیں

    جب کہیں خاک بھری نیند سے بھر جائے گا تو

    مأخذ :
    • کتاب : Gaflat ke Barabar (Pg. 42)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے