Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

یہ سیدھے جو اب زلفوں والے ہوئے ہیں

ریاضؔ خیرآبادی

یہ سیدھے جو اب زلفوں والے ہوئے ہیں

ریاضؔ خیرآبادی

MORE BYریاضؔ خیرآبادی

    یہ سیدھے جو اب زلفوں والے ہوئے ہیں

    ہمارے ہی سب بل نکالے ہوئے ہیں

    تبسم فزا میرے نالے ہوئے ہیں

    ذرا شوخ اب شرم والے ہوئے ہیں

    مرے ہاتھ پر کھیلے ہیں افعی زلف

    یہ سانپ آستینوں کے پالے ہوئے ہیں

    نہیں ہم کو لغزش کا ڈر میکدے میں

    کہ دو دو فرشتے سنبھالے ہوئے ہیں

    الجھتے ہیں سوتے میں زلفوں سے کیا کیا

    وبال ان کو کانوں کے بالے ہوئے ہیں

    چھپا کر بہت پی ہے مسجد میں واعظ

    یہ ظرف‌ وضو سب کھنگالے ہوئے ہیں

    شب وصل بولے نہ اب دل میں آئیں

    جو ارمان میرے نکالے ہوئے ہیں

    الگ ہے خدائی سے کچھ ساخت ان کی

    یہ بت اور سانچے میں ڈھالے ہوئے ہیں

    جو یاد اب تک آتے ہیں اہل چمن کو

    قفس میں وہی نغمے نالے ہوئے ہیں

    کسی پر دم حشر کیا آنکھ ڈالوں

    حسیں سب مرے دیکھے بھالے ہوئے ہیں

    جنوں رنگ لایا ہے پھر فصل گل میں

    نہیں لالہ سب زخم آلے ہوئے ہیں

    چراغ اب شب وصل جلنے نہ دیں گے

    وہ گیسو جو بل کھا کے کالے ہوئے ہیں

    نزاکت نے تیری گرایا نظر سے

    سب کتنے بھاری دوشالے ہوئے ہیں

    یہ اے شیخ گنبد نہیں مسجدوں میں

    خم مے ہمارے اچھالے ہوئے ہیں

    بھری بزم میں لطف خلوت نہیں ہے

    وہ نشے میں ہیں ہم سنبھالے ہوئے ہیں

    یہ کہتی ہے مست آنکھ ان کی شب وصل

    کئی آج خالی پیالے ہوئے ہیں

    بہے ہیں جو فرقت میں آنکھوں سے میری

    وہ دریا تو آنکھیں نکالے ہوئے ہیں

    ارے کانٹو جو اشک مژگاں سے ٹپکے

    وہی پاؤں پڑ پڑ کے چھالے ہوئے ہیں

    سبو آب زمزم سے دھو کر بھری مے

    اچھوتے ہیں جتنے کھنگالے ہوئے ہیں

    جوانی میں کیوں سر اٹھائیں نہ گیسو

    کہ اب ڈسنے والے یہ کالے ہوئے ہیں

    وہ محشر میں کیا عیب کھولیں گے میرے

    جو رحمت سے اب پردہ ڈالے ہوئے ہیں

    سنا ہے ریاضؔ اپنی داڑھی بڑھا کر

    بڑھاپے میں اللہ والے ہوئے ہیں

    مأخذ :
    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    મધ્યકાલથી લઈ સાંપ્રત સમય સુધીની ચૂંટેલી કવિતાનો ખજાનો હવે છે માત્ર એક ક્લિક પર. સાથે સાથે સાહિત્યિક વીડિયો અને શબ્દકોશની સગવડ પણ છે. સંતસાહિત્ય, ડાયસ્પોરા સાહિત્ય, પ્રતિબદ્ધ સાહિત્ય અને ગુજરાતના અનેક ઐતિહાસિક પુસ્તકાલયોના દુર્લભ પુસ્તકો પણ તમે રેખ્તા ગુજરાતી પર વાંચી શકશો

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے