یہ زمیں وہ آسماں ایسا نہ تھا

مہتاب حیدر نقوی

یہ زمیں وہ آسماں ایسا نہ تھا

مہتاب حیدر نقوی

MORE BYمہتاب حیدر نقوی

    یہ زمیں وہ آسماں ایسا نہ تھا

    اس طرح دریا کبھی بہتا نہ تھا

    زخم بھی اتنے ہرے پہلے نہ تھے

    یہ چمن گل رنگ بھی ایسا نہ تھا

    سر برہنہ سورجوں کے ساتھ تھے

    یوں خیال یار بے سایہ نہ تھا

    اک ستارہ دل میں روشن تھا مگر

    آنکھ نے اس کو کبھی دیکھا نہ تھا

    اس طرف ہی دیکھتا رہتا تھا میں

    وہ دریچہ دیر تک کھلتا نہ تھا

    ایک ہی صحرا کے باسی تھے سبھی

    کوئی اپنا کوئی بیگانہ نہ تھا

    ہر طرف تاریک تھی دنیا مگر

    اک چراغ دل تھا جو بجھتا نہ تھا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY