یوں علاج دل بیمار کیا جائے گا

افضل الہ آبادی

یوں علاج دل بیمار کیا جائے گا

افضل الہ آبادی

MORE BYافضل الہ آبادی

    یوں علاج دل بیمار کیا جائے گا

    شربت‌ دید سے سرشار کیا جائے گا

    حسرت دید میں بینائی گنوا بیٹھے جو

    اس سے کیسے ترا دیدار کیا جائے گا

    سو رہا ہوں میں زمانے سے ترا خواب لیے

    نیند سے کب مجھے بیدار کیا جائے گا

    ٹوٹ جائے گا بھرم پریوں کی شہزادی کا

    جب ترے حسن کو شہکار کیا جائے گا

    خود کشی کی خبر اخبار کی سرخی ہوگی

    قتل مجھ کو پس دیوار کیا جائے گا

    میں صداقت ہوں مجھے موت نہیں آئے گی

    ویسے مصلوب کئی بار کیا جائے گا

    ان چراغوں کے تبسم میں لہو ہے میرا

    کب ہواؤں کو خبردار کیا جائے گا

    دل کے جذبات جواں اور بھی ہو جائیں گے

    میری راہوں کو جو دشوار کیا جائے گا

    ہوں گے شرمندہ منادر کے کلس بھی افضلؔ

    کسی مسجد کو جو مسمار کیا جائے گا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY