یوں شور و شر کے سارے طلب گار سو گئے

اقبال اشہر قریشی

یوں شور و شر کے سارے طلب گار سو گئے

اقبال اشہر قریشی

MORE BYاقبال اشہر قریشی

    یوں شور و شر کے سارے طلب گار سو گئے

    سناٹے چیخنے لگے بازار سو گئے

    پلکوں پہ بوجھ بن گئیں جب دن کی رونقیں

    آنکھوں میں بھر کے خواب گراں بار سو گئے

    دیوار و در بھی اپنی مرمت سے تنگ تھے

    گر جائے اب مکان کہ معمار سو گئے

    سورج کے ساتھ تو بھی لہو رو کے ڈوب جا

    اے شام ہجر تیرے پرستار سو گئے

    اشہرؔ کسی کے قرب ہوس ناک سے غرض

    اپنا بھی دل تھا بھینچ کے اک بار سو گئے

    مأخذ :
    • کتاب : Be Sada Faryaad (Ghazals) (Pg. 100)
    • Author : Iqbal Ashhar Qureshi
    • مطبع : Fine Art Group Publications (2012)
    • اشاعت : 2012

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY