یوں تیری رہ گزر سے دیوانہ وار گزرے

مینا کماری ناز

یوں تیری رہ گزر سے دیوانہ وار گزرے

مینا کماری ناز

MORE BYمینا کماری ناز

    یوں تیری رہ گزر سے دیوانہ وار گزرے

    کاندھے پہ اپنے رکھ کے اپنا مزار گزرے

    بیٹھے ہیں راستے میں دل کا کھنڈر سجا کر

    شاید اسی طرف سے اک دن بہار گزرے

    دار و رسن سے دل تک سب راستے ادھورے

    جو ایک بار گزرے وہ بار بار گزرے

    بہتی ہوئی یہ ندیا گھلتے ہوئے کنارے

    کوئی تو پار اترے کوئی تو پار گزرے

    مسجد کے زیر سایہ بیٹھے تو تھک تھکا کر

    بولا ہر اک منارہ تجھ سے ہزار گزرے

    قربان اس نظر پہ مریم کی سادگی بھی

    سائے سے جس نظر کے سو کردگار گزرے

    تو نے بھی ہم کو دیکھا ہم نے بھی تجھ کو دیکھا

    تو دل ہی ہار گزرا ہم جان ہار گزرے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY