یوں تو کہنے کو ہم عدو بھی نہیں

نور جہاں ثروت

یوں تو کہنے کو ہم عدو بھی نہیں

نور جہاں ثروت

MORE BYنور جہاں ثروت

    یوں تو کہنے کو ہم عدو بھی نہیں

    ہاں مگر اس سے گفتگو بھی نہیں

    وہ تو خوابوں کا شاہزادہ تھا

    اب مگر اس کی جستجو بھی نہیں

    وہ جو اک آئینہ سا لگتا ہے

    سچ تو یہ ہے کہ روبرو بھی نہیں

    ایک مدت میں یہ ہوا معلوم

    میں وہاں ہوں جہاں کہ تو بھی نہیں

    ایک بار اس سے مل تو لو ثروتؔ

    ہے مگر اتنا تند خو بھی نہیں

    RECITATIONS

    عذرا نقوی

    عذرا نقوی

    عذرا نقوی

    Yun to kehne ko hum adu bhi nahin عذرا نقوی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY