ظالم بتوں سے آنکھ لگائی نہ جائے گی

جلیل مانک پوری

ظالم بتوں سے آنکھ لگائی نہ جائے گی

جلیل مانک پوری

MORE BYجلیل مانک پوری

    ظالم بتوں سے آنکھ لگائی نہ جائے گی

    پتھر کی چوٹ دل سے اٹھائی نہ جائے گی

    ہونے دو ہو رہے ہیں جو الفت کے تذکرے

    بگڑوگے تم تو بات بنائی نہ جائے گی

    کہہ دو یہ شمع سے کہ عبث تو ہے اشک بار

    پانی سے دل کی آگ بجھائی نہ جائے گی

    چلمن ہو یا نقاب ہو یا پردۂ حیا

    صورت تری کسی سے چھپائی نہ جائے گی

    ممکن ہے تیر ناز سے دل کو بچا بھی لوں

    لیکن نظر کی چوٹ بچائی نہ جائے گی

    آنکھیں خدا نے دی ہیں تو دیکھیں گے حسن یار

    کب تک نقاب رخ سے اٹھائی نہ جائے گی

    توبہ کو منہ لگا کے خجل ہوگے تم جلیلؔ

    جام و سبو سے آنکھ ملائی نہ جائے گی

    RECITATIONS

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    ظالم بتوں سے آنکھ لگائی نہ جائے گی فصیح اکمل

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY