زباں پہ حرف تو انکار میں نہیں آتا

رؤف خیر

زباں پہ حرف تو انکار میں نہیں آتا

رؤف خیر

MORE BYرؤف خیر

    زباں پہ حرف تو انکار میں نہیں آتا

    یہ مرحلہ ہی کبھی پیار میں نہیں آتا

    کھلے گا ان پہ جو بین السطور پڑھتے ہیں

    وہ حرف حرف جو اخبار میں نہیں آتا

    سمجھنے والے یقیناً سمجھ ہی لیتے ہیں

    ہمارا درد جو اظہار میں نہیں آتا

    یہ خاندان ہمارا بکھر گیا جب سے

    مزہ ہمیں کسی تہوار میں نہیں آتا

    ہمارے حق میں تو وہ چاند اور سورج ہے

    بہت دنوں سے جو دیدار میں نہیں آتا

    کمال یہ ہے کہ ہم خواب دیکھتے ہی نہیں

    کہ خواب دیدۂ بیدار میں نہیں آتا

    ہمارا شعر سمجھنے کی کچھ تو کوشش کر

    یہ کیا نوشتۂ دیوار میں نہیں آتا

    قلم کی کاٹ تو تلوار سے بھی بڑھ کر ہے

    مگر شمار یہ ہتھیار میں نہیں آتا

    وہ اپنا ذوق بڑھائیں اگر مزہ ان کو

    رؤف خیرؔ کے اشعار میں نہیں آتا

    RECITATIONS

    رؤف خیر

    رؤف خیر

    رؤف خیر

    زباں پہ حرف تو انکار میں نہیں آتا رؤف خیر

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY