ضبط کی کوشش ہے جان ناتواں مشکل میں ہے

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

ضبط کی کوشش ہے جان ناتواں مشکل میں ہے

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

MORE BYوحشتؔ رضا علی کلکتوی

    ضبط کی کوشش ہے جان ناتواں مشکل میں ہے

    کیوں عیاں ہو آنکھ سے وہ غم جو پنہاں دل میں ہے

    جس سے چاہو پوچھ لو تم میرے سوز دل کا حال

    شمع بھی محفل میں ہے پروانہ بھی محفل میں ہے

    عشق غارت گر نے شہہ دی حسن آفت خیز کو

    شوق بسمل ہی سے کس بل بازوئے قاتل میں ہے

    کچھ سمجھ کر ہی ہوا ہوں موج دریا کا حریف

    ورنہ میں بھی جانتا ہوں عافیت ساحل میں ہے

    خود تجھے آ جائے گا عاشق نوازی کا خیال

    تیرا رہرو کیوں خیال دوریٔ منزل میں ہے

    مدعائے عشق میرا کچھ نہیں جز ذوق عشق

    حسن کو حیرت کہ یہ کس سعیٔ بے حاصل میں ہے

    اپنی شان بے نیازی پر تمہیں کیا کیا ہیں ناز

    کاش تم اس شوق کو جانو جو میرے دل میں ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY