زہر اک دوجے کے اندر بو رہا ہے آج کل

ظفر محمود ظفر

زہر اک دوجے کے اندر بو رہا ہے آج کل

ظفر محمود ظفر

MORE BYظفر محمود ظفر

    زہر اک دوجے کے اندر بو رہا ہے آج کل

    کس قدر زہریلا انساں ہو رہا ہے آج کل

    شہر اپنا لوگ اپنے اور اپنا گھر بھی ہے

    آدمی کیوں پھر بھی تنہا ہو رہا ہے آج کل

    وقت سے پہلے مرے بچے بڑے ہونے لگے

    اک عجب سا یہ زمانہ ہو رہا ہے آج کل

    آئنے کے سامنے جانے سے کتراتے ہیں لوگ

    آئنہ بھی کتنا تنہا ہو رہا ہے آج کل

    پھول تتلی رنگ خوشبو دوست اور دشمن سبھی

    کاغذی ہر شے کا پیکر ہو رہا ہے آج کل

    اس مشینی دور کا انعام ہے یہ اے ظفرؔ

    آدمی پہچان اپنی کھو رہا ہے آج کل

    مأخذ :
    • کتاب : خموش لب (Pg. 121)
    • Author : ظفر محمود
    • مطبع : عرشیہ پبلی کیشنز دہلی۔95 (2019)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے