زخم دل کا خوں چکاں ایسا نہ تھا

علقمہ شبلی

زخم دل کا خوں چکاں ایسا نہ تھا

علقمہ شبلی

MORE BYعلقمہ شبلی

    زخم دل کا خوں چکاں ایسا نہ تھا

    اب سے پہلے جاں ستاں ایسا نہ تھا

    لرزہ بر اندام ہے قصر یقیں

    آدمی صید گماں ایسا نہ تھا

    پھلجھڑی سی چھوٹتی تھی رات دن

    شہر جاں تیرہ نشاں ایسا نہ تھا

    پھول جو تھے آرزو کے جل گئے

    شعلہ شعلہ گلستاں ایسا نہ تھا

    زیست کی رہ میں بلائیں تھیں مگر

    میرے سر پر آسماں ایسا نہ تھا

    شاخ گل تھی تتلیوں کے پر بھی تھے

    گلشن دل بے اماں ایسا نہ تھا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY