زخم دل پر لگا نہیں ہوتا

کوکب ذکی

زخم دل پر لگا نہیں ہوتا

کوکب ذکی

MORE BYکوکب ذکی

    زخم دل پر لگا نہیں ہوتا

    حال ایسا ہوا نہیں ہوتا

    ذکر جاناں ہوا نہیں ہوتا

    زخم دل پھر ہرا نہیں ہوتا

    چین سے زندگی بسر ہوتی

    روگ دل کا لگا نہیں ہوتا

    کچھ نہ کچھ بات ہو گئی ورنہ

    دل ربا بے وفا نہیں ہوتا

    انس اخلاص اور وفاداری

    دل میں شاعر کے کیا نہیں ہوتا

    دشت و صحرا میں گر نہیں پھرتے

    پاؤں میں آبلہ نہیں ہوتا

    تم سے شکوہ ہے بے وفائی کا

    سب سے تو یہ گلہ نہیں ہوتا

    ظلم بڑھتا ہے روز ظالم کا

    ختم یہ سلسلہ نہیں ہوتا

    چار آنکھیں نہیں ہوئی ہوتیں

    پیار کا حادثہ نہیں ہوتا

    یاد آتی نہ ہم کو جاناں کی

    جام غم کا بھرا نہیں ہوتا

    عدل کے بیچ کوئی حائل ہے

    کیوں کوئی فیصلہ نہیں ہوتا

    کہکشاں چاند تتلیاں جگنو

    ذکر جاناں میں کیا نہیں ہوتا

    رب کو بے شک پکارتے ہیں ہم

    جب کوئی آسرا نہیں ہوتا

    ہار جاتا ہوں میں انا سے ذکیؔ

    سر یہ کیوں معرکہ نہیں ہوتا

    مأخذ :
    • کتاب : ضبط فغاں(شعری مجموعہ) (Pg. 16)
    • Author : کوکب ذکی
    • مطبع : وشواس پبلی کیشنز ،حیدرآباد (2016)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY