زخم کے پھول سے تسکین طلب کرتی ہے

محسن نقوی

زخم کے پھول سے تسکین طلب کرتی ہے

محسن نقوی

MORE BYمحسن نقوی

    زخم کے پھول سے تسکین طلب کرتی ہے

    بعض اوقات مری روح غضب کرتی ہے

    جو تری زلف سے اترے ہوں مرے آنگن میں

    چاندنی ایسے اندھیروں کا ادب کرتی ہے

    اپنے انصاف کی زنجیر نہ دیکھو کہ یہاں

    مفلسی ذہن کی فریاد بھی کب کرتی ہے

    صحن گلشن میں ہواؤں کی صدا غور سے سن

    ہر کلی ماتم‌ صد جشن طرب کرتی ہے

    صرف دن ڈھلنے پہ موقوف نہیں ہے محسنؔ

    زندگی زلف کے سائے میں بھی شب کرتی ہے

    مآخذ
    • کتاب : Kulliyat-e-mohsin (Pg. 151)
    • Author : Mohsin Naqvi
    • مطبع : Mavra Publishers (2010)
    • اشاعت : 2010

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY