زخم رسنے لگا ہے پھر شاید

خالد شریف

زخم رسنے لگا ہے پھر شاید

خالد شریف

MORE BYخالد شریف

    زخم رسنے لگا ہے پھر شاید

    یاد اس نے کیا ہے پھر شاید

    سسکیاں گونجتی ہیں کانوں میں

    گھر کسی کا جلا ہے پھر شاید

    حاصل عمر کیا یہی کچھ ہے

    یہ ابھی سوچنا ہے پھر شاید

    در زنداں پہ پھر ہوئی دستک

    کوئی درد آشنا ہے پھر شاید

    پھر پرندے اڑے ہیں شاخوں سے

    اک دھماکہ ہوا ہے پھر شاید

    مسکراتے ہیں دیکھ دیکھ کے لوگ

    امتحان وفا ہے پھر شاید

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY