زمانے بھر کی کتابوں میں قید رہتا ہوں

شارق جمال

زمانے بھر کی کتابوں میں قید رہتا ہوں

شارق جمال

MORE BYشارق جمال

    زمانے بھر کی کتابوں میں قید رہتا ہوں

    خرد کے کہنہ نصابوں میں قید رہتا ہوں

    ترے جمال کے سب بھید جان کر بھی میں

    نہ جانے کیوں ترے خوابوں میں قید رہتا ہوں

    ترے بدن میں ہیں کتنی قیامتیں پنہاں

    بڑے شدید عذابوں میں قید رہتا ہوں

    کروں بھی کیسے بھلا دشت آگہی کا سفر

    کہ میں یقیں کے سرابوں میں قید رہتا ہوں

    وہ تو کہ پیرہن کائنات چاک کرے

    وہ میں کہ اتنے حجابوں میں قید رہتا ہوں

    ہے موج وقت قفس اور زندگی صیاد

    میں لمحہ لمحہ حبابوں میں قید رہتا ہوں

    وہ زندگی ہو کہ اقلیم ذات ہو شارقؔ

    نہ جانے کیسے خرابوں میں قید رہتا ہوں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے