زمیں پہ رہتے ہوئے کہکشاں سے ملتے ہیں

سراجؔ عالم زخمی

زمیں پہ رہتے ہوئے کہکشاں سے ملتے ہیں

سراجؔ عالم زخمی

MORE BYسراجؔ عالم زخمی

    زمیں پہ رہتے ہوئے کہکشاں سے ملتے ہیں

    ہمارے رنگ بھی اب آسماں سے ملتے ہیں

    ہمارے حال کی بوسیدگی پہ مت جاؤ

    خزانے اب بھی پرانے مکاں سے ملتے ہیں

    تری قسم کا بھی اب کیسے اعتبار کریں

    ترے یقیں تو ہمارے گماں سے ملتے ہیں

    وفا خلوص محبت ہمارا حصہ ہے

    ہر ایک شخص کو یہ سب کہاں سے ملتے ہیں

    گلے نہ ہم کو لگائیں کہ آپ جل جائیں

    ہمارے زخم بھی برق تپاں سے ملتے ہیں

    مأخذ :
    • کتاب : Lahja bolta hai (Pg. 109)
    • Author : Siraj Alam Zakhmi
    • مطبع : Gulistan-e-adab (2015)
    • اشاعت : 2015

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے