زرد پتوں کا غبار اڑتا ہوا

خورشید طلب

زرد پتوں کا غبار اڑتا ہوا

خورشید طلب

MORE BYخورشید طلب

    زرد پتوں کا غبار اڑتا ہوا

    خیمۂ گل میں شرار اڑتا ہوا

    بہہ چکی گدرائے جسموں کی شراب

    لمس اول کا خمار اڑتا ہوا

    سب نے دیکھا اور سب خاموش تھے

    ایک صوفی کا مزار اڑتا ہوا

    لگ چکی ہے سبز دریاؤں میں آگ

    بھاپ بن کر آبشار اڑتا ہوا

    مطمئن دیوار پر ہے چھپکلی

    خود ہی آئے گا شکار اڑتا ہوا

    اس نے آ کر ہاتھ ماتھے پر رکھا

    اور منٹوں میں بخار اڑتا ہوا

    مآخذ :
    • کتاب : Jahaan Gard (Pg. 124)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY