زرد پھولوں میں بسا خواب میں رہنے والا

علی اکبر ناطق

زرد پھولوں میں بسا خواب میں رہنے والا

علی اکبر ناطق

MORE BYعلی اکبر ناطق

    زرد پھولوں میں بسا خواب میں رہنے والا

    دھند میں الجھا رہا نیند میں چلنے والا

    دھوپ کے شہر مری جاں سے لپٹ کر روئے

    سرد شاموں کی طرف میں تھا نکلنے والا

    کر گیا آپ کی دیوار کے سائے پہ یقیں

    میں درختوں کے ہرے دیس کا رہنے والا

    اس کے تالاب کی بطخیں بھی کنول بھی روئے

    ریت کے ملک میں ہجرت تھا جو کرنے والا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے