ذرہ حریف مہر درخشاں ہے آج کل

واصف دہلوی

ذرہ حریف مہر درخشاں ہے آج کل

واصف دہلوی

MORE BYواصف دہلوی

    ذرہ حریف مہر درخشاں ہے آج کل

    قطرے کے دل میں شورش طوفاں ہے آج کل

    صد جلوہ بے حجاب خراماں ہے آج کل

    سہما ہوا سا گنبد گرداں ہے آج کل

    آنسو میں عکس نقشۂ دوراں ہے آج کل

    سمٹا ہوا سا عالم امکاں ہے آج کل

    برہم مزاج فطرت انساں ہے آج کل

    کس مخمصے میں غیرت یزداں ہے آج کل

    قسمت کی تیرگی کی کہانی نہ پوچھیے

    صبح وطن بھی شام غریباں ہے آج کل

    شیرازۂ امید شکستہ ہے ان دنوں

    جمعیت خیال پریشاں ہے آج کل

    ہے اک نگاہ مہر کی واصفؔ کو آرزو

    واصفؔ کا دل شکستہ و ویراں ہے آج کل

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    ذرہ حریف مہر درخشاں ہے آج کل نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY