ذہن ہر سو نگاہ کرتا ہے

شوق اثر رامپوری

ذہن ہر سو نگاہ کرتا ہے

شوق اثر رامپوری

MORE BYشوق اثر رامپوری

    ذہن ہر سو نگاہ کرتا ہے

    دل فقط ان کی چاہ کرتا ہے

    حق وہ رکھتا ہے روٹھنے کا بھی

    پیار جو بے پناہ کرتا ہے

    جو کن انکھیوں سے دیکھتا ہے اسے

    باسلیقہ گناہ کرتا ہے

    فقر بھی اس کا ہے شہنشاہی

    دل کو جو خانقاہ کرتا ہے

    دل ثبوت بقائے ہستی میں

    دھڑکنوں کو گواہ کرتا ہے

    قبل منزل چراغ راہ گزر

    خوف کو سد راہ کرتا ہے

    شوقؔ تخلیق شعر کیا جانے

    صرف کاغذ سیاہ کرتا ہے

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY