ذہن پر بوجھ رہا، دل بھی پریشان ہوا

طارق قمر

ذہن پر بوجھ رہا، دل بھی پریشان ہوا

طارق قمر

MORE BYطارق قمر

    ذہن پر بوجھ رہا، دل بھی پریشان ہوا

    ان بڑے لوگوں سے مل کر بڑا نقصان ہوا

    مات اب کے بھی چراغوں کو ہوئی ہے لیکن

    چاک اس بار ہوا کا بھی گریبان ہوا

    اوڑھے پھرتا ہوں شہادت کی لہو رنگ قبا

    رنگ تیرا تھا سو وہ ہی مری پہچان ہوا

    عادتاً آنکھ چھلک اٹھی ہے ہنستے ہنستے

    تو مرے دوست بلا وجہ پریشان ہوا

    تیز پانی کی سی آواز گلے سے نکلی

    اور سن کر اسے خنجر بڑا حیران ہوا

    شاخ دل پر نہ کھلا اب کے برس ایک بھی پھول

    کیسا آباد تھا یہ باغ جو ویران ہوا

    دوست کیا اب تو منافق بھی کوئی ساتھ نہیں

    سوکھے پھولوں سے بھی محروم یہ گلدان ہوا

    آج اس درجہ مہذب جو نظر آتا ہے

    یہ وہ انسان ہے صدیوں میں جو انسان ہوا

    دل سے جاتا نہیں طارقؔ کسی کافر کا خیال

    ہم مسلمان ہوئے دل نہ مسلمان ہوا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY