زیر زمیں ہوں تشنۂ دیدار یار کا

مرزارضا برق ؔ

زیر زمیں ہوں تشنۂ دیدار یار کا

مرزارضا برق ؔ

MORE BYمرزارضا برق ؔ

    زیر زمیں ہوں تشنۂ دیدار یار کا

    عالم وہی ہے آج تلک انتظار کا

    گزرا شراب پینے سے لے کون درد سر

    ساقی دماغ کس کو ہے رنج خمار کا

    محشر کے روز بھی نہ کھلے گی ہماری آنکھ

    صدمہ اٹھا چکے ہیں شب انتظار کا

    عبرت کی جا ہے عالم دنیا نہ کر غرور

    سر کاسۂ گدا ہے کسی تاجدار کا

    بعد فنا بھی ہے مرض عشق کا اثر

    دیکھو کہ رنگ زرد ہے میرے غبار کا

    الفت نہ کچھ پری سے نہ کچھ حور سے ہے عشق

    مشتاق برقؔ روز ازل سے ہے یار کا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے