زیر و بم سے ساز خلقت کے جہاں بنتا گیا

فراق گورکھپوری

زیر و بم سے ساز خلقت کے جہاں بنتا گیا

فراق گورکھپوری

MORE BYفراق گورکھپوری

    زیر و بم سے ساز خلقت کے جہاں بنتا گیا

    یہ زمیں بنتی گئی یہ آسماں بنتا گیا

    داستان جور بے حد خون سے لکھتا رہا

    قطرہ قطرہ اشک غم کا بے کراں بنتا گیا

    عشق تنہا سے ہوئیں آباد کتنی منزلیں

    اک مسافر کارواں در کارواں بنتا گیا

    میں ترے جس غم کو اپنا جانتا تھا وہ بھی تو

    زیب عنوان حدیث دیگراں بنتا گیا

    بات نکلے بات سے جیسے وہ تھا تیرا بیاں

    نام تیرا داستاں در داستاں بنتا گیا

    ہم کو ہے معلوم سب روداد علم و فلسفہ

    ہاں ہر ایمان و یقیں وہم و گماں بنتا گیا

    میں کتاب دل میں اپنا حال غم لکھتا رہا

    ہر ورق اک باب تاریخ جہاں بنتا گیا

    بس اسی کی ترجمانی ہے مرے اشعار میں

    جو سکوت راز رنگیں داستاں بنتا گیا

    میں نے سونپا تھا تجھے اک کام ساری عمر میں

    وہ بگڑتا ہی گیا اے دل کہاں بنتا گیا

    واردات دل کو دل ہی میں جگہ دیتے رہے

    ہر حساب غم حساب دوستاں بنتا گیا

    میری گھٹی میں پڑی تھی ہو کے حل اردو زباں

    جو بھی میں کہتا گیا حسن بیاں بنتا گیا

    وقت کے ہاتھوں یہاں کیا کیا خزانے لٹ گئے

    ایک تیرا غم کہ گنج شائیگاں بنتا گیا

    سر زمین ہند پر اقوام عالم کے فراقؔ

    قافلے بستے گئے ہندوستاں بنتا گیا

    مآخذ:

    • کتاب : Gul-e-Naghma (Pg. 21)
    • Author : Firaq Gorakhpuri
    • مطبع : Maktaba Farogh-e-urdu Matia Mahal Jama Masjid Delhi (2006)
    • اشاعت : 2006

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY