ضد پہ ہے دنیا تو ضد پہ تیرا دیوانہ بھی ہے

بلال سہارن پوری

ضد پہ ہے دنیا تو ضد پہ تیرا دیوانہ بھی ہے

بلال سہارن پوری

MORE BYبلال سہارن پوری

    ضد پہ ہے دنیا تو ضد پہ تیرا دیوانہ بھی ہے

    پاؤں میں زنجیر بھی تیری طرف جانا بھی ہے

    ٹوٹ کر دل نے ہمارے کل تجھے چاہا بھی تھا

    ٹوٹ کر دل نے ہمارے آج یہ جانا بھی ہے

    میر صاحب دیکھیے آ کر ہمارے دور میں

    اب غزل ہے آئینہ اور آئینہ خانہ بھی ہے

    دیکھ لے جو بھی انہیں وہ چھوڑ دے پینی شراب

    یہ تری آنکھیں نہیں ہیں ایک مے خانہ بھی ہے

    دیکھ لے کیسے منایا ہجر تیرا جان جاں

    درد دل آنکھوں میں آنسو اور ویرانہ بھی ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY