زیست ہے اک معصیت سوز دلی تیرے بغیر

آنند نرائن ملا

زیست ہے اک معصیت سوز دلی تیرے بغیر

آنند نرائن ملا

MORE BY آنند نرائن ملا

    INTERESTING FACT

    (اپریل 1946 ء ؁)

    زیست ہے اک معصیت سوز دلی تیرے بغیر

    ہاں محبت بھی ہے اک آلودگی تیرے بغیر

    شام غم تیرے تصور ہی سے آنکھوں میں چراغ

    ورنہ میرے گھر میں ہو اور روشنی تیرے بغیر

    یہ جہاں تنہا بھلا کیا مجھ کو دے پاتا شکست

    میں نے کب کھایا فریب دوستی تیرے بغیر

    رات کے سینہ میں ہے اک زخم جس کا نام چاند

    اک سنہری جوئے خوں ہے چاندنی تیرے بغیر

    ہر نفس ہے پے بہ پے ناکامیوں کا سامنا

    زیست ہے اک مستقل شرمندگی تیرے بغیر

    دے گئی دھوکا مگر شائستگیٔ غم مری

    آ رہا ہے دل پہ الزام خوشی تیرے بغیر

    علم و عقل و نام و جاہ و زور و زر سب ہیچ عشق

    ہو کے سب کچھ بھی نہیں کچھ آدمی تیرے بغیر

    دل کی شادابی کی ضامن ہے تو ہی اے یاد دوست

    آ نہ پائی غم کے پھولوں میں نمی تیرے بغیر

    ایک اک لمحہ میں جب صدیوں کی صدیاں کٹ گئیں

    ایسی کچھ راتیں بھی گزری ہیں مری تیرے بغیر

    زندگی ملاؔ کی ہے محجوب نام زندگی

    رہ گئی ہے شاعری ہی شاعری تیرے بغیر

    مآخذ:

    • Book : Kulliyat-e-Anand Narayan Mulla (Pg. 291)
    • Author : Khaliq Anjum
    • مطبع : National Council for Promotion of Urdu Language-NCPUL (2010)
    • اشاعت : 2010

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY