زندگی گزری مری خشک شجر کی صورت

آتش بہاولپوری

زندگی گزری مری خشک شجر کی صورت

آتش بہاولپوری

MORE BYآتش بہاولپوری

    زندگی گزری مری خشک شجر کی صورت

    میں نے دیکھی نہ کبھی برگ و ثمر کی صورت

    خوب جی بھر کے رلائیں جو نظر میں ان کی

    قیمتی ہوں مرے آنسو بھی گہر کی صورت

    اپنے چہرے سے جو زلفوں کو ہٹایا اس نے

    دیکھ لی شام نے تابندہ سحر کی صورت

    اس نئے دور کی تہذیب سے اللہ بچائے

    مسخ ہوتی نظر آتی ہے بشر کی صورت

    حرم و دیر سے مطلب نہ کلیسا سے غرض

    کاش یہ بھی کہیں ہوتے ترے گھر کی صورت

    نیک اعمال بھی اوروں کے نہیں جپتے ہیں

    عیب اپنے نظر آتے ہیں ہنر کی صورت

    کیا کوئی اس پہ بھی افتاد پڑی ہے آتشؔ

    ابر برسا ہے مرے دیدۂ تر کی صورت

    مأخذ :
    • کتاب : Jada-e-manzil (Pg. 27)
    • Author : Atish Bahawalpuri
    • مطبع : Nirali Duniya Publications (2001)
    • اشاعت : 2001

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY