زندگی کا درد لے کر انقلاب آیا تو کیا

شکیل بدایونی

زندگی کا درد لے کر انقلاب آیا تو کیا

شکیل بدایونی

MORE BYشکیل بدایونی

    زندگی کا درد لے کر انقلاب آیا تو کیا

    ایک دوشیزہ پہ غربت میں شباب آیا تو کیا

    تشنۂ انوار ہے اب تک عروس زندگی

    بادلوں کی پالکی میں آفتاب آیا تو کیا

    اب تو آنکھوں پر غم ہستی کے پردے پڑ گئے

    اب کوئی حسن مجسم بے نقاب آیا تو کیا

    پھر وہی جہد مسلسل پھر وہی فکر معاش

    منزل جاناں سے کوئی کامیاب آیا تو کیا

    اک تجلی سے منور کیجیے قصر حیات

    ہر تجلی پر دل خانہ خراب آیا تو کیا

    بات جب ہے غم کے ماروں کو جلا دے اے شکیلؔ

    تو یہ زندہ میتیں مٹی میں داب آیا تو کیا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    بیگم اختر

    بیگم اختر

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    زندگی کا درد لے کر انقلاب آیا تو کیا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY