زندگی کی آندھی میں ذہن کا شجر تنہا

جاوید اختر

زندگی کی آندھی میں ذہن کا شجر تنہا

جاوید اختر

MORE BY جاوید اختر

    زندگی کی آندھی میں ذہن کا شجر تنہا

    تم سے کچھ سہارا تھا آج ہوں مگر تنہا

    زخم خوردہ لمحوں کو مصلحت سنبھالے ہے

    ان گنت مریضوں میں ایک چارہ گر تنہا

    بوند جب تھی بادل میں زندگی تھی ہلچل میں

    قید اب صدف میں ہے بن کے ہے گہر تنہا

    تم فضول باتوں کا دل پہ بوجھ مت لینا

    ہم تو خیر کر لیں گے زندگی بسر تنہا

    اک کھلونا جوگی سے کھو گیا تھا بچپن میں

    ڈھونڈتا پھرا اس کو وو نگر نگر تنہا

    جھٹپٹے کا عالم ہے جانے کون آدم ہے

    اک لحد پہ روتا ہے منہ کو ڈھانپ کر تنہا

    مآخذ:

    • Book: LAVA (Pg. 107)
    • Author: JAVED AKHTAR
    • مطبع: RAJ KAMAL PARKASHAN (2012)
    • اشاعت: 2012

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites