زندگی کی ہر نفس میں بے کلی تیرے بغیر

سید مبین علوی خیرآبادی

زندگی کی ہر نفس میں بے کلی تیرے بغیر

سید مبین علوی خیرآبادی

MORE BYسید مبین علوی خیرآبادی

    زندگی کی ہر نفس میں بے کلی تیرے بغیر

    ہر خوشی لگتی ہے دل کو اجنبی تیرے بغیر

    فصل گل نے لاکھ پیدا کی فضائے پر بہار

    غنچۂ دل پر نہ آئی تازگی تیرے بغیر

    تشنہ کامی کو مری سیراب کرنے کے لئے

    اٹھتے اٹھتے وہ نظر بھی رہ گئی تیرے بغیر

    کوئی جلوہ کوئی منظر مجھ کو بھاتا ہی نہیں

    چاند کی صورت بھی ہے بے نور سی تیرے بغیر

    رہ گیا آخر سکوں نا آشنا ہو کر مبینؔ

    آہٹیں ہونے لگیں ہیں درد کی تیرے بغیر

    مآخذ:

    • کتاب : Pirahn-e-harf (Pg. 143)
    • Author : Mubeen Alvi Khairabadi
    • مطبع : Mubeen Alvi Khairabadi (1999)
    • اشاعت : 1999

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY