زندگی کیا ہے اک سفر کے سوا

صوفی تبسم

زندگی کیا ہے اک سفر کے سوا

صوفی تبسم

MORE BYصوفی تبسم

    زندگی کیا ہے اک سفر کے سوا

    ایک دشوار رہ گزر کے سوا

    کیا ملا تشنۂ محبت کو

    ایک محروم سی نظر کے سوا

    عشق کے درد کی دوا کیا ہے

    سب سمجھتے ہیں چارہ گر کے سوا

    کچھ نہیں غم گساریٔ احباب

    اہتمام غم دگر کے سوا

    کتنی تنہا تھیں عقل کی راہیں

    کوئی بھی تھا نہ چارہ گر کے سوا

    دولت سجدہ ہو سکی نہ نصیب

    اور بھی در تھے تیرے در کے سوا

    کچھ نہیں ہے فسوں طرازی حسن

    عشق کی شوخئ نظر کے سوا

    مأخذ :
    • کتاب : (Sau Baar Chaman Mahka)Kulliyat-e- Sufi Tabassum (Pg. 161)
    • Author : Sufi Ghulam Mustafa Tabassum
    • مطبع : Alhamd Publications, Lahore (2008)
    • اشاعت : 2008

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY