aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

زندگی موت کے آغوش سے پیدا کرنا

جنبش خیرآبادی

زندگی موت کے آغوش سے پیدا کرنا

جنبش خیرآبادی

MORE BYجنبش خیرآبادی

    زندگی موت کے آغوش سے پیدا کرنا

    ڈوب کر بحر میں طوفان سے کھیلا کرنا

    آئے رونا بھی تو ہنسنے کا ارادہ کرنا

    جوش غم میں نہ کبھی ضبط سے گزرا کرنا

    دیکھنا شوق کی فطرت کو نہ رسوا کرنا

    چشم مشتاق یونہی ان کا نظارہ کرنا

    رنگ لائے گا عجب جلوہ‌ گہہ محشر میں

    ذوق‌ دیدار مرا آپ کا پردہ کرنا

    موج فطرت کا ہر انداز ہے تخریب شعار

    اے چمن زار بہاروں سے نہ رشتہ کرنا

    بہت آسان تھا ربی ارنی کہہ دینا

    کوئی آساں نہ تھا جلووں کا نظارہ کرنا

    چاک دامانیٔ گل بر سر معراج بہار

    ہے جنوں خیز ادا ہوش کا دعویٰ کرنا

    سیکھئے عقدہ کشائی کی ادائیں جنبشؔ

    نہ ہوا کچھ بھی یہ تقدیر کا شکوہ کرنا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے